182

مقبوضہ کشمیرکی کشیدہ صورتحال پرسلامتی کونسل کااجلاس

(ویب ڈیسک) مقبوضہ کشمیرکی کشیدہ صورتحال اور لائن آف کنٹرول پر بھارتی اشتعال انگیزیوں کے حوالے سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کااجلاس ہوا۔

سلامتی کونسل کے اجلاس میں مقبوضہ کشمیر کی کشیدہ صورتحال اور بھارتی پابندیوں کے حوالے سے غور کیا گیا۔ اقوام متحدہ کے مبصرین نے اجلاس کو بریفنگ دی، بریفنگ کے بعد کونسل کے ممبران کے درمیان صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا،کونسل کے تمام 15 ممبران نے بحث میں حصہ لیا۔ سلامتی کونسل کے ارکان نے اس بات کی نفی کر دی کہ کشمیر بھارت کا اندرونی معاملہ ہے۔

اجلاس کے بعد اقوام متحدہ میں چین کے مستقل مندوب زینگ جن نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےکہاکہ کشمیر ہمیشہ سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ایجنڈے میں شامل ہے، چین کا کشمیر کے معاملے پر موقف بالکل واضح ہے۔ وادی کی صورتحال پر تشویش ہے۔

روس کے مستقبل مندوب دمتری پولیانسکی نے سوشل میڈیا پر اپنے بیان میں  کہا کہ سلامتی کونسل کےاجلاس میں کشمیر کا معاملہ زیر بحث آیا۔ پاکستان اور بھارت کے تعلقات معمول پر لانے کے خواہاں ہیں۔ ہم امید کرتے ہیں کہ شملہ معاہدے اور لاہور اعلامیہ کی بنیاد پر دو طرفہ کوششوں کے ذریعے دونوں ملکوں کے اختلافات دور ہوجائیں گے۔


خیال رہے کہ یہ پانچ ماہ میں کشمیر کی صورتحال پر سلامتی کو نسل کا دوسرا اجلاس ہے۔
 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں