203

افغان مہاجرین کی واپسی اس لیے چاہتے ہیں کیونکہ۔۔۔وزیراعظم کا افغان مہاجرین کی واپسی کےحوالےسےبڑابیان

اسلام آباد،(بےلاگ نیوز)وزیراعظم عمران خان کہتے ہیں کہ نائن الیون کے بعد اسلام اور دہشتگردی کوساتھ جوڑا گیا ،گزشتہ 20سال پاکستانی عوام کیلئے اقتصادی لحاظ سے بہت مشکل رہے،تمام تر مشکلات کے باوجود پاکستان نے افغان مہاجرین کی مدد جاری رکھی،سخاوت کا تعلق بینک بیلنس سے نہیں ہے۔

وزیر اعظم عمران خان نے افغان مہاجرین سے متعلق عالمی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس لئے افغان مہاجرین کی واپسی نہیں چاہتے کہ پچاس لاکھ مہاجرین یہاں مقیم ہیں بلکہ اس لئے واپسی اور ان کی بحالی چاہتے ہیں کیونکہ افغانستان کے عوام امن کے مستحق ہیں ۔وہ گزشتہ چالیس سال سے مشکلات کا شکار ہیں۔افغان عوام نے40برس میں کسی بھی قوم سے زیادہ مشکلات اٹھائی ہیں۔ افغانستان میں امن کیلئے ہر ممکن تعاون کرنے کیلئے تیار ہیں، اس حوالے سے ہماری حکومت ہر وہ سہولت فراہم کرے گی جو امن کیلئے ضروری ہو۔

عمران خان  نے کہاہم افغانستان میں امن چاہتے ہیں ،ڈیڑھ برس کے دوران میری حکومت نے افغان امن عمل کیلئے جوہوسکاکیاہے،افغانستان میں تنازع جاری رہنا پاکستان کے حق میں نہیں اس لئے پاکستان افغان امن عمل کیلئے جو کچھ ہو سکتاہے وہ کر رہا ہے ،ماضی میں حالات جیسے بھی رہے ہوں،ہم سب اب افغانستان میں امن چاہتے ہیں،اپناگھرچھوڑناانسان کیلئے بہت مشکل فیصلہ ہوتاہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہاافغان بچے پاکستانی ٹیم کوکرکٹ کھیلتادیکھتے تھے، افغان مہاجرین کے بچوں نے پاکستان میں کرکٹ کھیلناسیکھی۔ افغانستان کی کرکٹ ٹیم آج عالمی درجہ بندی میں شامل ہوچکی ہے۔پاکستان نے کرکٹ میں بھی افغانستان کی مدد کی ۔وزیراعظم عمران خان نے کہادعا ہے افغانستان میں امن مذاکرات کامیاب ہوں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں