24

پنجاب میں کورونا کے مریضوں میں کمی آنا شروع ہو گئی

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک )پنجاب میں کورونا کے مریضوں میں واضح کمی آنا شروع ہوگئی جس کی ایک وجہ علامات کے بغیر ٹیسٹوں میں کمی بھی بتائی گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق حکومت پنجاب نے عالمی ادارہ صحت کی نئی گائیڈ لائن جاری ہونے کے بعد علامات کے بغیر کورونا ٹیسٹ کرنا بند کردیے ہیں جس کے بعد مریضوں میں واضح کمی سامنے آئی ہے۔

صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے بتایا کہ ڈبلیو ایچ او کی گائیڈ لائن پر صرف کورونا کی علامات والے افراد کے ٹیسٹ کیے جارہے ہیں اور اگر کسی کا ٹیسٹ مثبت آئے تو پھر اس کے گھر والوں کے بھی ٹیسٹ کیے جاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ سمارٹ لاک ڈاو¿ن سے بھی اچھے نتائج سامنے آئے ہیں ، صوبے میں کورونا کم ہورہاہے۔

یاسمین راشد کا کہنا تھا کہ ہمارے ڈاکٹروں اور طبی عملے نے دن رات کام کیا، انہیں سلام پیش کرتے ہیں۔واضح رہے کہ پنجاب میں کورونا کے کیسز کی کل تعداد 84 ہزار سے زائد ہے اور 1900 سے زائد افراد جاں بحق بھی ہوچکے ہیں۔

دوسری جانب لاہور سمیت پنجاب کے 7 شہروں کے مختلف علاقوں میں 24 جولائی تک سمارٹ لاک ڈاو¿ن کا آغاز کر دیا گیا ہے، پنجاب کے جن 7 شہروں کے مختلف علاقوں میں 24 جولائی تک سمارٹ لاک ڈاو¿ن کا آغاز کیا گیا ہے ان میں لاہور، ملتان، فیصل آباد، گوجرانوالہ، سیالکوٹ، گجرات اور راولپنڈی شامل ہیں۔

لاہور میں A2 بلاک ٹاو¿ن شپ، ای ایم ای سوسائٹی، چونگی امر سدھو کے بازار سے ملحقہ علاقہ بند رہے گا۔ پنجاب گورنمنٹ سرونٹ ہاوسنگ سکیم، واپڈا ٹاو¿ن، جوہر ٹاو¿ن سی بلاک اور گرین سٹی میں سمارٹ لاک ڈاو¿ن کر دیا گیا۔

محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر پنجاب کی جانب سے اس حوالے سے باضابطہ نوٹیفکیشن جاری کر دیا ہے۔ سیل ہونے والے علاقوں میں کوئی پبلک ٹرانسپورٹ استعمال نہیں ہوگی۔

ضروری کام کے لیے ایک شخص کو ٹرانسپورٹ پر ٓمدورفت کی اجازت ہوگی۔ سیل ہونے والے مقامات میں تمام سرکاری، نجی دفاتر اور شاپنگ مالز بند رہیں گے، تاہم بینکوں کو کھلا رکھنے اور ریسٹورٹنس پر ٹیک اوے کی اجازت ہوگی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں