95

قربانیاں کے جانور آن لائن نہیں خریدے جاسکتے۔نئی بحث چھیڑ گئی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک )چیئرمین رویت ہلال کمیٹی مفتی منیب الرحمٰن نے تین جولائی کو لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران قربانی کے جانوروں کی آن لائن خریداری کی سختی سے مخالفت کرتے ہوئے فتویٰ جاری کیا تھا کہ آن لائن خریدے ہوئے جانور کی قربانی نہیں ہوسکتی۔

انہوں نے مزید کہا تھا کہ لوگ قربانی کے جانور آن لائن خریدنے سے گریز کریں کیونکہ یہ درست طریقہ نہیں۔ ان کے مطابق آن لائن خریدے گئے جانور کو پرکھا نہیں جاسکتا کہ اس میں کوئی نقص تو نہیں۔

مفتی منیب الرحمٰن کے مطابق: ‘ لوگ خود منڈی جا کر دیکھ بھال کر جانور خریدیں اور حکومت کو چاہیے کہ منڈیاں شہروں سے باہر لگائی جائیں اور وہاں کرونا وائرس کے حوالے سے ایس او پیز کا خاطر خواہ خیال رکھا جائے۔’

مفتی منیب الرحمٰن کا کہنا تھا کہ لوگوں کو اس عید الاضحی پر اجتماعی قربانی کی طرف جانا چاہیے،’ اس طرح ہمیں کرونا وائرس کا پھیلاﺅ روکنے میں مدد ملے گی۔’

مفتی منیب الرحمٰن کے اس بیان کے بعد ان پر سوشل میڈیا پر تنقید کی جارہی تھی۔ انڈیپینڈنٹ اردو کے مطابق انکی ٹیم نے جمعے کو مفتی منیب الرحمٰن سے رابطہ کرکے اس فتوے کے بارے میں مزید جاننے کی کوشش کی تو انھوں نے یہ کہہ کر فون بند کردیا کہ وہ معذرت خواہ ہیں کہ اس فتوے یا اس موضوع پر مزید بات نہیں کرسکتے۔

انٹیپیںڈنٹ اردو کے مطابق انکی ٹیم نے اسلامی نظریاتی کونسل (سی آئی آئی) کے چیئرمین ڈاکٹر قبلہ ایاز نے ٹیلی فون پر بات کرتے ہوئے کہا کہ آن لائن قربانی کا جانور خرید کر قربانی کرنا بھی ایک صورت ہوسکتی ہے مگر اس کے لیے ضروری ہے کہ خریدار کو پختہ یقین ہو کہ وہ جن سے قربانی کا جانور خرید رہے ہیں وہ قابل اعتماد ہیں اور جو جانور ان کو دے رہے ہیں وہ جانور بے عیب ہو۔’ قربانی کے لیے جانور میں جو خصوصیتیں چاہیں وہ اگر ہیں تو آن لائن خریدے ہوئے جانور کی قربانی میں کوئی قباحت نہیں۔’

وفاقی وزارتِ نیشنل ہیلتھ سروسز کی کرونا وائرس سے متعلق عوام الناس کو معلومات دینے کے لیے بنائی گئی سرکاری ویب سائٹ پر واضح طور پر مقامی انتظامیہ کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ چھوٹے بڑے شہروں میں آن لائن جانوروں کی خریداری، ای فروخت اور آن لائن قربانی کے بڑھتے ہوئے رجحان کی حوصلہ افزائی کرے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں