221

عدالت کو ہلکا نہ لیں، سب سرکاری اداروں کی تنخواہ ایک کردیں،چیف جسٹس

اسلام آباد(بےلاگ نیوز)وزارت خزانے کے ملازمین کے الائونس سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے مقدمے کی تیاری کےلیے التوا مانگنے پرڈپٹی اٹارنی جنرل کی سرزنش کردی،چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالت کو ہلکا نہ لیں،عدالت التواکےلیے نہیں بیٹھی۔ہرسرکاری ادارے کی تنخواہ دوسرے ادارے سے مختلف ہے۔سب سرکاری اداروں کی تنخواہ ایک کردیں۔

چیف جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں2 رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی۔دوران سماعت ڈپٹی اٹارنی جنرل اصغر علی نے مقدمے کی تیاری کےلیے التوا کی استدعا کی جس پرعدالت نے ان کی سرزنش کردی،،،چیف جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ ڈپٹی اٹارنی جنرل صاحب آپ نے ججز پر ظلم کیا۔ججز کیس کی فائل پڑھ کر آتے ہیں۔آپ لاء آفیسر کیسے بن گئے،کیا آپ کو نوکری پر رکھا جا سکتا ہے؟

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے بتایا کہ ریونیو ڈویژن کی ورکنگ دیگر ڈویژن سے مختلف ہے۔۔۔چیف جسٹس نے کہا کہ ہر سرکاری ادارے کی تنخواہ دوسرے ادارے سے مختلف ہے۔سب سرکاری اداروں کی تنخواہ ایک کردیں۔

عدالت نے ڈپٹی اٹارنی جنرل کو مقدمے کی تیاری کےلیے وقت دیتے ہوئے سماعت موسم سرما کی تعطیلات کے اختتام تک ملتوی کردی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں