212

امریکا،طالبان امن معاہدہ،طالبان عارضی جنگ بندی پررضامند

(ویب ڈیسک) امریکا اور طالبان کے درمیان ہونےوالا امن معاہدہ اپنےحتمی مرحلے میں داخل،طالبان کونسل نے معاہدے پر دستخط کے لیے عارضی جنگ بندی پر رضامندی ظاہر کر دی، جنگ بندی کی حتمی منظوری طالبان کے سربراہ ہیبت اللہ اخوندزادہ دیں گے۔

غیر ملکی میڈیا کیمطابق طالبان نے اس خبر کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ افغانستان میں عارضی جنگ بندی معاہدے پر رضامند ہو گئے ہیں اس دوران امریکا کیساتھ امن معاہدے پر دستخط کا بھی امکان ہے۔امریکی فوجیوں کی وطن واپسی کیلئے طالبان یہ امن معاہدہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ اس وقت افغان سرزمین پر کم وبیش 12 ہزار امریکی فوجی موجود ہیں۔

امریکا طالبان امن مذاکرات کے چار اہم نکات ہیں جن میں جنگ بندی، افغان حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکرات، امریکی فوج کا انخلا اور افغان سرزمین کا دہشتگرد کارروائیوں کیلئے استعمال نہ ہونا شامل ہے۔

حال ہی میں امریکی ایلچی زلمے خلیل زاد نے ایک بیان میں کہا تھا کہ پاکستان نے افغان لیڈر ملا برادر عبدالغنی کو امریکا کی درخواست پر رہا کیا تھا تاکہ افغان امن مذاکرات کو تیز کرنے میں مدد مل سکے۔ اس سلسلے میں پاکستانی حکومت نے تعمیری کردار ادا کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں